نبی ﷺ نے فرمایا : رات کو اُٹھ کر بیوی کے ساتھ یہ کام ضرور کرو –

نبی ﷺ نے فرمایا : رات کو اُٹھ کر بیوی کے ساتھ یہ کام ضرور کرو - Globe News

مومن ہر وقت اس بات کی فکر رکھتا ہے کہ اس کا ہر عمل ایک تو اللہ کے ہاں قابل قبول ہو اور ایک ایکسی لنس کے درجے پر ہو کہ وہ لوگوں کے لئے بھی مشعل راہ بنے سلیمان علیہ السلام الصلوۃ والسلام کہا کرتے تھے عقل مند ہر وقت اس فکر میں ہوتا ہے کہ میرا گھر کیسے بنا رہے اور بے وقوف ہر وقت اس چکر میں ہوتا ہے چھوٹی

چھوٹی بات کو پہاڑ بنا کر گھر کو اجاڑنے کی کوشش کرتا ہے اور یہی لفظ سلیمان علیہ السلام نے عورتوں کے بارے میں بھی بولے تو مثالی گھر بنانے کے لئے رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم نے مختلف اصول مردوں کو بھی دیئے ہیں اور عورتوں کو بھی دیئے ہیں اور یہی شریعت کا ایک خوبصورت مزاج ہے خوبصورت عدل ہے کہ

جہاں مردوں کے حقوق کو بیان کیا وہاں عورتوں کے حقوق کو بھی بیان کیا رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم نے مرد کی جو ذمہ داریاں لگائی ہیں اپنے پیغامات کے ذریعے کہ سب سے پہلا اصول وہ اختیار کرے کہ جس طرح وہ چاہتا ہے کہ اللہ کے قریب ہوجائے اللہ کے انعامات کا مستحق بن جائے اس کو چاہئے کہ اپنی بیوی کے لئے بھی مواقع مہیا کرے یہی وجہ ہے رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم کی حیات طیبہ پر اگر ہم غور کرتے ہیں

تو آپ کا معمول مبارک کیا تھا کہ آپ اکیلے تہجد کے لئے نہیں اُٹھتے تھے بلکہ آپ کیا فرماتے عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ آپ بھی اُٹھو آپ بھی تہجد پڑھو بلکہ رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم نے آواز دی ان حجرے والیوں کو اٹھائیں یہ بھی نماز پڑھیں یہی وجہ ہے رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم نے عمومی ایک حکم دیا

اللہ کی مسجدوں سے اللہ کے گھروں سے عورتوں کو مت روکا کرو ان کو اجازت دیاکرو یہ بھی دین سیکھیں اور خود صحابیہ انصاریہ نے جب یہ گزارش کی تھی یارسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم آپ مردوں کو تو دین سکھاتے ہیں تو ہمارا حق نہیں ہے تو اللہ کے رسول صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم نے ایک دن ان کے لئے خاص کیا

اور ایک انصاریہ صحابیہ کے گھر میں جمع ہو کر عورتیں بیٹھتی اور آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم ان کو دین کی باتیں سمجھایا کرتے تو رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم کے اس فرمان کی روشنی میں مرد کی ذمہ داری ہے کہ جہاں وہ خود نیکیاں کرنا چاہتا ہے اپنے گھر کو سکون کا گہوارہ بنا سکتا ہے تب جب وہ نیکی کے

لئے اپنی بیوی کو بھی تیار کرے ۔ اپنے اعمال پر توجہ دیجئے حقوق العباد لازمی پورے کیجئے اور حقوق اللہ کا بھی خیال رکھئے کیونکہ اللہ کبھی حقوق کے تلف کرنے والے کو پسند نہیں فرماتا قیامت کے دن اللہ اپنے حقوق تو معاف فرمادے گامگر حقوق العباد یعنی اللہ کی مخلوق کے حقوق جو آپ نے ادا نہیں کئے ہوں گے ان کو معاف نہیں فرمائے گا ان پر آپ کو سزاد دی جائے گی اور آپ کی نیکیوں سے ان حقوق کو ادا کیا جائے گا ۔ اللہ ہم سب کا حامی و ناصر ہو۔آمین

Sharing is caring!