رمضان میں نمکیات کی کمی کو پورا کرنے کے لیے ان دوچیزوں کا استعمال کریں

رمضان میں نمکیات کی کمی کو پورا کرنے کے لیے ان دوچیزوں کا استعمال کریں

جیسا کہ رمضان کی آمد ہے۔ تو اس وقت سب سے زیادہ نیوٹریشنز پر بات کرنے کی ضرورت ہے۔ کیونکہ رمضان جب آتا ہے۔ نیوٹریشنز ، روحانیت، اور خدمت خلق بھی ساتھ لے کر آتاہے۔ رمضان المبار ک کے مینویا مختلف کھانوں کی جن کی سحری اور افطار میں افادیت ہوتی ہے۔ اسی طرح بات کریں گے ۔ کہ آپ کو افطاری میں کونسی ایسی دو میجیکل اجزاء ہیں۔ جن کے چاہے آپ دل کے مریض ہیں۔ شوگر کے مریض ہیں ۔ کسی ہارمونل ایشو کے مریض ہیں۔

آپ کو ا پنی افطاری میں ان کااستعمال کرنا ہے۔ کیونکہ خاص یہ روزے ہمارے پاس گرمیوں کے روزے ہیں۔ اور گرمیوں میں روزوں سب سے زیادہ ہوتا ہے۔ کہ جسم میں پانی کی کمی اور نمکیات کی جو کمی ہےوہ زیادہ ہوجاتی ہے۔ خود ری ہائیڈریٹ کرنا۔ یعنی اپنے پانی اور نمکیات جو کمی ہے۔ اس کو پورے کرنا بہت زیادہ ضرور ی ہے۔ آج ہم بات کرنے لگیں ہیں پانی اور نمکیا ت کی کمی پوری کرنے کی ۔ اس کامطلب ہے افطار سے متعلق کچھ

اجزاء کی بات کریں گے ۔ آپ کے ذہن میں گو ل ہونا چاہیے کہ آپ ایسے اجزاء چنیں۔ جو ریفائن پروسیس یعنی نقصان دہ شوگر بھی نہ ہو۔ آپ کے بلڈ کے انرجی کے لیول اور آپ کے بلڈ کے شوگر کےلیول ایک دم بحال کرے۔ آپ کو ہائیڈریٹ بھی کرے ۔ آپ کے جسم میں پانی اور نمکیات کی کمی کو بھی پور ارکھے۔ آپ کے ہاضمے میں بھی بوجھ نہ پڑے اور آپ کا پیٹ بھی بھر اہوارکھے۔ وہ جادوئی اجزاء کے نام ہیں کھجور اور لسی۔ مطلب تمام روزے آپ نے

کھجور اور نمکین لسی سے افطارکرنا ہے۔ تاکہ روزے کے جتنے بھی بائیومیڈیکل ہیلتھ کے آپ کا فائدہ کا ذکر کیا ہے۔ اس کا اثر جو ہے اس کو چار چاند لگ جائیں۔اور اس کے اثر کو آپ دوبالا کرسکیں۔ سب سےپہلے کھجور کے فائدے کے بارے میں بات کریں گے۔ جب آپ افطاری کرتے ہیں آپ کا یہ مین گول ہونا چاہیے کہ آپ کے جسم کا انرجی لیول اوپر جائے آپ کے کھجور میں قدرتی شوگر، فرکٹوزاور سکروز موجود ہوتاہے۔ اب کیونکہ یہ قدرتی شوگر ہوتا ہے یہ

پروسیس شوگر نہیں ہوتا ۔ یہ وہ شوگر نہیں ہوتا جس کومشینوں سے ریفائن کیا جاتا ہے یہ آپ کے پاس بلڈ گلو کو ز میں اسپائک ایک دم سے اوپر نہیں کرتا۔ جو کھانے بلڈ میں شوگر آہستہ آہستہ سے بڑھتے ہیں وہ کھانے بہتر ہوتے ہیں۔ اورجو کھانے بلڈمیں شوگر ایک دم سے بڑھتے ہیں۔ وہ آپ کی صحت کے لیے مضر ہوتے ہیں۔ رسول اللہ ﷺ کا ارشاد ہےکہ: افطار کھجور سے کیا کرو۔ یہ آپﷺ کی سنت بھی ہے۔ اب کھجور میں مناسب طور پر اس قدر ہائی

بھی ہوتا ہے۔ کہ وہ آپ کوفوراً انرجی مہیا کرے ۔ کیونکہ یہ آپ کے پا س پروسیس شوگر نہیں ہوتا۔ کیونکہ یہ آپ کے پاس قدرتی شوگر ہوتاہے ۔ یہ بلڈ شوگر لیول میں گڑبڑ نہیں کرتا۔ اگر آپ چاہتے ہیں کہ آپ کے جسم میں تیزی انرجی لیول آئے۔ اور آپ کی بلڈ شوگر ریگولیشن بھی رہے۔ اور آپ کا بلڈ شوگر لیول بھی ڈسٹرب نہ ہو۔ تو افطاری دو کھجوروں کے ساتھ ضرو ر کریں۔ خاص شوگر کے مریض کے لیے روزہ بہت اچھا ہے۔ دوسری چیز جس کا آپ کو بہت زیادہ خیال رکھنا ضروری ہے۔ وہ ہے آپ کی ہائیڈریشن ۔ ہائیڈریشن کا مطلب یہ نہیں ہوتا کہ آپ نے اپنے جسم کو پانی سے بھر دیا۔ کیلے پوٹاشیم کے لیے مشہو ر ہے۔ کھجور میں کیلے سے بھی زیادہ پوٹاشیم موجود ہوتی ہے۔ پوٹاشیم آپ کے جسم کی نمکیات کا اہم حصہ ہے۔ اور یہ آپ کی باڈی کوہائیڈ ریٹ کرتاہے۔ اگر آپ ہائیڈریٹڈ رہنا چاہتے ہیں۔ تو کھجور کا استعمال ضرور کریں۔