این اے 221 تھرپارکر، غیر حتمی اور غیر سرکاری نتیجہ آگیا، پیپلز پارٹی نے پی ٹی آئی کو اتنے ووٹوں سے شکست دے دی کہ یقین نہ آئے

این اے 221 تھرپارکر، غیر حتمی اور غیر سرکاری نتیجہ آگیا، پیپلز پارٹی نے پی ٹی آئی کو اتنے ووٹوں سے شکست دے دی کہ یقین نہ آئے

تھرپارکر (نیوز ڈیسک )این اے 221 کے ضمنی الیکشن کے تمام 318 پولنگ سٹیشنز کے غیر حتمی و غیر سرکاری نتائج موصول ہوگئےہیں جن کے مطابق پاکستان پیپلزپارٹی کے امیدوار نے بھاری مارجن سے کامیابی حاصل کر لی ہے۔ غیر حتمی و غیر سرکاری نتائج کے مطابق پاکستان پیپلزپارٹی کے امیدوار پیپلز پارٹی کے ا میر علی شاہ ایک لاکھ تین

ہزار 502ووٹوں کے ساتھ کامیاب قرار پائے ہیں۔ تحریک انصاف کے نظام الدین راہموں50ہزار 553ووٹوں کے ساتھ دوسرے نمبر پر رہے۔ پیپلزپارٹی کے امیدوار نے یہ نشست 52ہزار 949 ووٹوں کے بھاری مارجن سے حاصل کی۔ این اے 221 تھرپارکر پر ضمنی انتخاب کے لئے پولنگ کا عمل اتوار کے روز صبح 8 بجے شروع ہوا جو شام 5 بجے تک

بلاتعطل جاری رہا۔اس حلقہ میں پیپلزپارٹی اور پی ٹی آئی سمیت 12 امیدوار مدمقابل تھے۔ یہاں رجسٹرڈ ووٹرز کی تعداد دو لاکھ 81 ہزار 900 تھی۔حلقے بھر میں 318 پولنگ اسٹیشنز قائم کئے گئے ، جن میں سے 95 کو انتہائی حساس جب کہ 130 کو حساس قرار دیا گیا تھا۔ پولنگ کا عمل غیر جانبدارانہ اور شفاف بنانے کے لیے چار

ہزارپولیس اہلکار اور ایک ہزاررینجرز کے جوان سکیورٹی پر تعینات کیے گئے۔این اے 221 کی پولنگ کے دوران بعض ناخوشگوار واقعات بھی پیش آئے۔ پولنگ کے دوران کیسراڑ سماں پولنگ اسٹیشن میں نامعلوم افراد نے پولنگ کے سامان کو آگ لگادی، واقعے کی اطلاع ملتے ہی پولیس اور رینجرز کی بھاری نفری موقع پر پہنچ گئی، جہاں سے پی ٹی آئی کے امان اللہ سموں سمیت پانچ کارکنوں کو گرفتار کرلیا گیا ۔واضح رہے کہ 2018 کے عام انتخابات میں این اے 221 سے پیپلز پارٹی کے پیر نور محمد شاہ جیلانی کامیاب ہوئے تھے تاہم چند ماہ قبل یہ نشست ان کے انتقال کے باعث خالی ہوئی تھی۔