حضرت عیسیٰ ؑ اور تین روٹیا ں ایک خوبصورت واقعہ –

حضرت عیسیٰ ؑ اور تین روٹیا ں ایک خوبصورت واقعہ - Sabee Kazmi

حضرت عیسیٰ ؑ اپنے شاگرد کو لیکر کسی سفر کو نکلے راستے میں ایک جگہ رکے اور شاگرد سے پوچھا تمہاری جیب میں کچھ ہے شاگرد نے کہا میرے پاس دو درہم ہیں حضرت عیسیٰ ؑ نے اپنی جیب سے ایک درہم نکال کر اسے دیا اور فرمایا یہ تین درہم ہوجائیں گے قریب ہی گاؤں ہے تم وہاں سے تین درہم کی روٹیاں لے آیا وہ گیا اور تین روٹیاں لیں

راستے میں آتے ہوئے وہ سوچنے لگا حضرت عیسیٰ ؑ نے تو ایک درہم دیا تھا اور دو درہم میرے تھا جبکہ روٹیاں تین ہیں ان میں سے آدھی روٹیاں حضرت عیسیٰ ؑ کھائیں اور آدھی روٹیاں مجھے ملیں گی لہذا بہتر ہے کہ میں ایک روٹی پہلے کھا لوں چنانچہ اس نے راستے میں ایک روٹی کھالی اور دو روٹیاں لیکر حضرت عیسیٰ ؑ کے پاس پہنچا ۔آپؑ نے ایک

روٹی کھالی اور اس سے پوچھا تین درہم کی کتنی روٹیاں ملی تھیں اس نے کہا اے اللہ کے نبی دو روٹیاں ملی تھیں ایک آپ نے کھائی اور ایک میں نے کھالی ۔ حضرت عیسیٰ ؑ وہاں سے روانہ ہوگئے راستے میں ایک دریا آیا شاگر د نے حیران ہوکر پوچھا اے اللہ کے نبی ہم دریا عبور کیسے کریں گے جبکہ یہاں تو کوئی کشتی نظر نہیں آتی ۔ حضرت

عیسیٰ ؑ نے فرمایا گھبراؤ مت میں آگے چلوں گا تم میرا دامن پکڑ میرے پیچھے چلتے آنا خدا نے چاہا تو ہم دریا پار کرلیں گے چنانچہ حضرت عیسیٰ ؑ نے دریا میں قدم رکھا اور شاگر نے بھی انکا دامن تھام لیا اللہ کے حکم سے آپ نے دریا کو اس طرح عبور کرلیا کہ ایک پاؤں بھی گیلے نہ ہوئے شاگرد نے یہ دیکھ کر کہا میری ہزاروں جانیں آپ پر قربان ہوں

آپ جیسا صاحب اعجاز نبی پہلے مبعوث ہی نہیں ہوا آپؑ نے فرمایا یہ معجزہ دیکھ کر تیرے ایمان میں کچھ اضافہ ہوا ہے اس نے کہا جی ہاں میرادل نور سے بھر گیا ہے ۔ آپؑ نے فرمایا اگر تمہارا دل نورانی ہوچکا ہے تو بتاؤ روٹیاں کتنی تھیں اس نے کہا اے اللہ کے نبی روٹیاں بس دو ہی تھیں پھر آپؑ وہاں سے آگے چلے راستے میں ہرنوں کا ایک

غول گزر رہا تھا آپؑ نے ایک ہرن کو اشارہ کیا اور وہ آپ کے پاس چلا آیا آپ نے اس کو ذب۔ح کرکے اس کا گ۔وشت کھایا اور شاگرد کو بھی کھلایا ۔ جب دونوں گ۔وشت کھا چکے تو حضرت عیسیٰ ؑ نے اس کی کھال پر ٹھوکر م۔ار کرکہا اللہ کے حکم سے زن۔دہ ہوجا ہرن زندہ ہوگیا اور چوکڑیاں بھرتا ہوا دوسرے ہرنوں سے جاکر دوبارہ مل گیا ۔

شاگرد یہ معجزہ دیکھ کر حیران ہوگیا اور کہنے لگا اللہ کا شکر ہے جس نے مجھے آپ جیسا نبی اور استاد عطاء فرمایا۔حضرت عیسیٰ ؑ نے فرمایا یہ معجزہ دیکھ کر تمہارے ایمان میں کچھ اضافہ ہوا شاگرد نے کہا اے اللہ کے نبی میرا ایمان پہلے سے دوگنا ہوچکا ہے آپؑ نے فرمایا پھر بتاؤ روٹیاں کتنی تھیں شاگرد نے کہا اے اللہ کے نبی روٹیا ں بس دو ہی تھیں۔